Saturday, 14 Dec 2019

فیصل آبادمیڈیکل یونیورسٹی کے شعبہ یورالوجی کے زیراہتمام تقریب کا انعقاد۔

فیصل آبادمیڈیکل یونیورسٹی کے شعبہ یورالوجی کے زیراہتمام مثانے کے غدودکے کینسر کی وجوہات اور علاج معالجہ کی تازہ ترین صورت حال کے حوالے سے ”پری ایلومنی یورالوجی“سمپوزیم مقامی ہوٹل میں منعقد ہوا۔وائس چانسلر فیصل آباد میڈیکل یونیورسٹی پروفیسر ڈاکٹر ظفر علی چوہدری اس موقع پر مہمان خصوصی تھے۔انچارج شعبہ یورالوجی اینڈرینل ٹرانسپلانٹیشن فیصل آباد میڈیکل یونیورسٹی ڈاکٹرغلام محبوب سبحانی،انچارج شعبہ یورالوجی انڈیپنڈنٹ میڈیکل کالج پروفیسر ڈاکٹر صفدر حسن سیال،صدر پی اے یو ایس پروفیسر ڈاکٹر ممتاز احمد،ابوامیڈیکل کالج کے پروفیسر ڈاکٹر زاہداقبال،یورو،اونکولوجسٹ(لاہور)ڈاکٹر عرفان احمد،انچارج شعبہ ریڈیالوجی ڈاکٹر عاصم شوکت کے علاوہ پروفیسر ڈاکٹر ممتاز احمد،ڈاکٹر عرفان منیرودیگر ماہر ڈاکٹرز بھی موجود تھے۔وائس چانسلر فیصل آباد میڈیکل یونیورسٹی پروفیسر ڈاکٹر ظفر علی چوہدری نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ سمپوزیم میں ماہرین کے سٹیٹ آف دی آرٹ لیکچرز کے ذریعے گردہ،مثالہ اور غدود کے امراض،ان کی پیچیدگیوں اورجدید طریقہ علاج کے بارے میں نوجوان ڈاکٹرز کو مزید سیکھنے کے مواقعوں کے ساتھ شعبے میں تحقیق سے آگاہی میں مدد ملے گی۔انہوں نے کہا کہ تربیت کا مسلسل عمل ہی پیشہ وارانہ مہارت کا باعث ہے اور بطور ڈاکٹر ہمیں مریضوں کی زیادہ سے زیادہ خدمت کے لئے اپنے آپ کو تیار رکھنا چاہیے جس کے لئے ایسے سمپوزیم ممدومعاون ثابت ہوتی ہیں۔انہوں نے کہا کہ نوجوان ڈاکٹرز کے لئے گردہ،مثانہ،غدود اوردیگر متعلقہ امراض کی جدید سرجری وعلاج سے آگاہی انتہائی اہمیت کی حامل ہے اور یہ پری ایلومنی یورالوجی سمپوزیم اسی سلسلے کی کڑی ہے جس کے انعقاد کے سلسلے میں شعبہ یورالوجی کی کاوشیں لائق تحسین ہیں۔انچارج شعبہ یورالوجی پروفیسر ڈاکٹر غلام محبوب سبحانی نے سمپوزیم کے انعقاد کے اغراض ومقاصد پر روشنی ڈالی اور کہا کہ بحثیت میڈیکل ریسرچ کا دامن تھامے رہنا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ ایسی سمپوزیم سے دیگرڈاکٹرز وماہرین کے ساتھ تجربات کے تبادلہ کے مواقع حاصل ہوتے ہیں بلکہ گردہ ومثانہ کے مریضوں کے بہترعلاج معالجہ میں بھی مدد ملتی ہے۔انچارج شعبہ یورالوجی انڈیپنڈنٹ میڈیکل کالج پروفیسر ڈاکٹر صفدر حسن سیال نے کہا کہ گردوں اور مثانے کی بیماریوں کے اسباب اور ان سے بچاؤ کے لئے آگاہی پیدا کرنے کی بھی ضرورت ہے۔انہوں نے بتایا کہ 50سال کی عمر میں سال میں دو دفعہ میڈیکل چیک اپ کے ساتھ حفاظتی تدابیر اورپرہیز بھی کیا جائے۔انہوں نے یورالوجیکل سمپوزیم کے انعقاد کو سراہا اور کہا کہ ایسے پروگرامز کی بدولت ایک ہی چھت تلے مختلف تجربات سے آگاہی ہوتی ہے۔پروفیسر ڈاکٹر زاہد اقبال،ڈاکٹر عرفان احمد،ڈاکٹر عاصم شوکت ودیگر ڈاکٹرز نے بھی اظہار خیال کرتے ہوئے گردہ،مثانہ وبڑے غدود کی بیماریوں کے علاج معالجہ کے بارے میں اپنے تجربات سے آگاہ کیا۔

Related Posts

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *